وزیرداخلہ کا غیرذمہ دارانہ بیان، اے این پی کا ریاست سے وضاحت کا مطالبہ

ریاست سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وزیرداخلہ کے بیان کی وضاحت کریں، اسفندیارولی خان
وزیرداخلہ اعجاز شاہ انتہائی لاعلم اور بے خبر وزیر ہے
اے این پی نے سیکیورٹی فورسز کے شانہ بشانہ دہشتگردی کے خلاف جنگ لڑی
وزیرداخلہ وضاحت کریں کہ اے این پی میدان میں کھڑی تھی، آج بھی کھڑی ہے لیکن موصوف کا کیا کردار تھا؟
وزیرداخلہ کو معلوم ہونا چاہیے کہ بشیربلور،میاں افتخارحسین کے اکلوتے فرزند سمیت کئی سو کارکن دہشتگردی کے خلاف جنگ میں شہید ہوئے ہیں
اُس وقت سیکیورٹی فورسز ملک میں دہشتگردی کے خلاف آپریشن کررہے تھے
اے این پی نے ریاست کے شانہ بشانہ کھڑے ہو کر اپنی جانوں کے نذرانے دیے
اے این پی نے دہشتگردی کے ناسور کو ختم کرنے کیلئے کئی سو قیمتیں جانیں گنوادی ہیں
جس وقت دہشتگردوں کے خلاف آپریشن ہورہے تھے، موصوف وزیرداخلہ کہاں تھے؟
ریاست وضاحت کریں ،کیا اے این پی دہشتگردی کے خلاف جنگ ریاست کے تحفظ کیلئے لڑ رہی تھی یا ریاست کے خلاف؟

عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کہا ہے کہ وزیرداخلہ اعجاز شاہ کا بیان انتہائی غیرذمہ دارانہ ہے۔ موصوف ایک لاعلم اور بے خبر وزیر ہیں ۔ اے این پی نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں کئی سو کارکنان اور رہنمائوں کی قربانیاں دی ہیں۔ باچاخان مرکز پشاور سے جاری بیان میں اے این پی سربراہ نے مطالبہ کیا ہے کہ ریاست وزیرداخلہ کے بیان کی وضاحت کریں اور ساتھ میں اس بات کی بھی وضاحت کی جائے کہ کیا اے این پی دہشتگردی کے خلاف جنگ ریاست کے تحفظ کیلئے لڑ رہی تھی یا ریاست کے خلاف؟ اے این پی سربراہ نے کہا کہ جس وقت بشیربلور اور میاں افتخارحسین کے اکلوتے فرزند کو شہید کیا گیا اس وقت سیکیورٹی فورسز ملک میں دہشتگردی کے خلاف آپریشن کررہی تھی اور عوامی نیشنل پارٹی نے دہشتگردی کے خلاف یہ جنگ سیکیورٹی فورسز کے شانہ بشانہ کھڑے ہو کر لڑی اور دہشتگردی کے ناسور کو ختم کرنے کیلئے کئی سو قیمتی جانوں کے نذرانے پیش کیے۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ جس وقت دہشتگردوں کے خلاف ملک میں جنگ جاری تھی اس وقت موصوف وزیرداخلہ کہاں تھے؟ ریاست کو ان کے بیان کی وضاحت کرنی چاہیے کہ کیا اے این پی کی دہشتگردی کے خلاف جنگ ریاست کے تحفظ کیلئے تھی یا ریاست کے خلاف؟