سردی کی شدت، ڈیورنڈ لائن کے آر پار گلان اور بنوں بکاخیل کیمپوں میں پناہ گزینوں کی مشکلات میں اضافہ

سردی کی شدت میں بڑنے سے افغانستان گلان کیمپ اور بنوں بکاخیل کیمپ میں رہائش پذیر وزیرستانی پناہ گزینوں کی مشکلات میں اضافہ ہورہا ہے۔

شاکر وزیر جس کا تعلق شمالی وزیریستان سے ہے نے پحتون نامہ کو بتایا کی ان پناہ گزینوں کا کوئی پوچھنے والا نہیں پورے نارتھ وزیرستان کی واپسی اپنے آبائی علاقوں میں ہوچکی ہیں جبکہ تحصیل شوال تحصیل دتہ خیل کے اقوام مداخیل اور ظوئے سیدگی ابھی تک کیمپوں میں رہائش پذیر ہیں ۔

وزیر نے بتایا کہ گلان کیمپ میں ہجرت کرنے والوں نے حکومت سے کہی بار درخواست کی ہیں کہ افغانستان میں رہائش پذیر وزیرستانی آئی ڈی پیز کو پر امن طریقے سے اپنے علاقوں کیطرف واپس آنے دیا جائے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس کے ساتھ ساتھ بنوں بکاخیل کیمپ میں رہائش پذیر آئی ڈی پیز کو زندگی کی بنیادی سہولیات فراہم کی جائے ، “تحصیل شوال کے ذیادہ تر غریب لوگ جو بکاخیل آئی ڈی پیز کیمپ میں نہیں بلکہ اپنی مدد آپ کے تحت خیموں میں یا رشتہ داروں کے ساتھ زندگی بسر کر رہے ہیں اس کیلئے بھی رہائش کا بندوبست کیا جائے” ۔شاکر